بن سلمان صہیونی ریاست کو تسلیم کرنے کے لیے آمادہ




امریکی ٹی وی چینل نے ایک ڈاکومنٹری کے ذریعے راز فاش کیا ہے کہ سعودی ولیعہد بن سلمان صہیونی ریاست کو تسلیم کرنے کے لیے آمادہ ہیں۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، امریکی ٹی وی چینل PBS نے “ولی عہد” کے عنوان سے ایک ڈاکومنٹری شائع کی ہے جس میں محمد بن سلمان کے متعدد امریکہ کے دورے اور ڈونلڈ ٹرمپ سے ان کی ملاقاتیں اور ان کے درمیان ہونے والی بعض خفیہ گفتگووں کا راز فاش کیا ہے۔ ڈاکومنٹری میں دکھایا گیا ہے کہ بن سلمان نے امریکی صدر سے خواہش ظاہر کی کہ اگر امریکہ سعودی عرب کی مدد کرتا ہے تو سعودی عرب ایران کو شکست دے کر مشرق وسطیٰ پر اپنا کنٹرول حاصل کر سکتا ہے اور بعد ازآں سعودی عرب اسرائیل کو تسلیم کرنے کے لیے تیار ہے۔
ڈاکومنٹری کے اینکر نے کہا ہے کہ محمد بن سلمان نے ٹرمپ سے اپیل کی تھی کہ وہ ایران کو شکست دینے کے لیے ان کی مدد کریں اور اپنے منصوبوں کے ذریعے سعودی عرب کو مشرق وسطیٰ میں ایک کلیدی اداکار کے طور پر حمایت کریں۔
اس ڈاکومنٹری پر تجزیہ کرنے والے واشنگٹن پوسٹ کے کالم نویس ڈیویڈ اینگناٹیوس نے بن سلمان سے نقل کرتے ہوئے لکھا کہ بن سلمان نے کہا: “میں ایسے مشرق وسطیٰ کو دیکھ رہا ہوں کہ اسرائیل بھی جس کا ایک حصہ ہے۔ میں اسرائیل کو تسلیم کرنے کے لیے تیار ہوں اور اس کے ساتھ تجارتی تعلقات رکھنا چاہتا ہوں”۔
ڈیویڈ کے بقول بن سلمان کی باتوں نے ٹرمپ اور کوشنر کو اکسایا کہ وہ صدی کی ڈیل منصوبہ تیار کریں اور اسرائیل کو علاقے میں تحفظ فراہم کریں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/۱۰۳