اسرائیل کے خلاف عمومی جہاد کے اعلان سے دریغ نہیں کریں گے: الحوثی




انصار اللہ کے سیکرٹری جنرل نے کہا ہے کہ اگر اسرائیل نے ہماری قوم کیخلاف کوئی احمقانہ قدم اٹھایا تو اس کے خلاف عمومی جہاد کے اعلان اور اس پر کاری ضربیں لگانے میں ذرہ برابر بھی دریغ نہیں کریں گے۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، یمن کی اسلامی مزاحمتی تحریک انصاراللہ کے سربراہ سید عبدالملک الحوثی نے نبی کریم حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے جشن ولادت اور ہفتۂ وحدت کی مناسبت سے خطاب کرتے ہوئے اسرائیل کیطرف سے یمن پر ممکنہ حملے کیطرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر اسرائیل نے ہماری قوم کیخلاف کوئی احمقانہ قدم اٹھایا تو اس کے خلاف عمومی جہاد کے اعلان اور اس پر کاری ضربیں لگانے میں ذرہ برابر بھی دریغ نہیں کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق انصاراللہ یمن کے سربراہ سید عبدالملک الحوثی نے خطاب کے دوران کہا کہ عراق اور لبنان کے حالات پر امریکہ کیطرف سے خوشی کے اظہار نے اس کے موقف کی قلعی کو کھول دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپنی داخلی مشکلات پر قابو پانے کے طریقۂ کار کے بارے میں اسلامی ممالک کو خبردار کرتا ہوں، تاکہ عراق اور لبنان کی طرح ان کے اقدامات میں بھی کوئی خلاء باقی نہیں نہ رہ جائے، جس سے دشمن کھل کر فائدہ اٹھائے۔

انہوں نے کہا کہ ہم ثقافتی، فکری، اقتصادی اور سیاسی میدانوں میں حقیقی آزادی چاہتے ہیں جبکہ عالمی استکبار نے اپنی تمامتر صلاحیتیں اور وسائل اقوامِ عالم پر اپنا تسلط جمانے کی خاطر لگا رکھے ہیں اور اسکا آخری مقصد کھلی گمراہی اور اقدار و اخلاق کی تباہی ہے۔ انصاراللہ یمن کے سربراہ سید عبدالملک الحوثی نے تاکید کرتے ہوئے کہا کہ ہماری قوم اپنے آزادی کے ایسے رستے سے کبھی پیچھے نہیں ہٹے گی، جس کا پہلا ثمر خود مختاری ہے جبکہ ہماری قوم پر جارحیت کا مرتکب ہونیوالی ہر طاقت اپنی حرکتوں کی ذمہ دار خود ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ہم یمن مخالف سعودی اتحاد کو نصیحت کرتے ہیں کہ ہمن پر مسلط کردہ اپنی جنگ ختم کرتے ہوئے یمن کا اقتصادی محاصرہ کھول دے، کیونکہ جنگ کو مزید جاری رکھنا ہماری دفاعی طاقت اور دشمن پر ہماری مزید کاری ضربوں میں اضافے کا سبب بنے گا، جو ہمارا مسلّم حق ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/۱۰۳