فلسطین کے حامی امریکی اسرائیلی منصوبے ’صدی کی ڈیل‘ کی نسبت خبردار رہیں: سید حسن نصر اللہ - خیبر

فلسطین کے حامی امریکی اسرائیلی منصوبے ’صدی کی ڈیل‘ کی نسبت خبردار رہیں: سید حسن نصر اللہ

30 جون 2018 16:58
السيد حسن نصرالله

سید حسن نصر اللہ نے صدی کی ڈیل کو علاقے میں امریکہ کی پہلی ترجیح قرار دیتے ہوئے کہا کہ شام کی صورتحال، امریکہ کی ایٹمی معاہدے سے علیحدگی اور ایران کے خلاف نئی پابندیاں عائد کرنے کی امریکی دھمکی یہ سب ’’صدی کی ڈیل‘‘ کے منصوبے کا حصہ ہیں۔

خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ: حزب اللہ لبنان کے سیکرٹری جنرل سید حسن نصر اللہ نے امریکی مجوزہ منصوبے صدی کی ڈیل کے حوالے سے گزشتہ روز اپنے خطاب میں کہا: وہ گروہ اور افراد جو مسئلہ فلسطین کے حامی ہیں علاقے میں رونما ہونے والی حالیہ تبدیلوں کی نسبت ہوشیار رہیں واضح ہے کہ ہم ’’صدی کی ڈیل‘‘ کے عنوان سے ایک نئے امریکی اسرائیلی منصوبے کی طرف بڑھ رہے ہیں۔
انہوں نے ایران کے ایٹمی معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: شام کی صورتحال اور اس کے علاوہ امریکہ کا ایٹمی معاہدے سے انخلاء اور ایران کے خلاف نئی پابندیاں عائد کرنے کی دھمکی وغیرہ وغیرہ یہ سب امریکی منصوبے ’’صدی کی ڈیل‘‘ کا حصہ ہیں کہ جس کا اصلی مقصد مسئلہ فلسطین کا حساب چکانا ہے۔
حزب اللہ کے سیکریٹری جنرل نے شام کی صورتحال اور دہشتگردوں کی شکست کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ شام کی جنگ در اصل علاقے اور مستقبل کی جنگ ہے اور ہم شام میں دہشتگردوں کو ہونے والی شکست فاش کا نظارہ کر رہے ہیں۔
حزب اللہ کے سیکریٹری جنرل نے شام کی سرحد پر مزاحمتی گروہوں پر اسرائیلی فضائی حملوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ عراق و شام کی سرحد پر اس قسم کے حملوں کا جواب دیا جائے گا۔
سید حسن نصر اللہ نے یمن کے حالات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ چند روز قبل سعودی اتحاد نے اعلان کیا تھا کہ صعدہ پر فضائی حملے کے نتیجے میں حزب اللہ کے آٹھ افراد شہید ہوئے اور پھر دوسری خبر یہ دی کہ حزب اللہ کے آٹھ افراد گرفتار ہوئے ہیں۔ ہم نے یمن میں کوئی شہید نہیں دیا۔ مجھے اس بات پر شرمندگی کا احساس ہے کہ ہم یمن کے مجاہدوں کے ساتھ نہیں ہیں اور میں یہ کہتا ہوں کہ کاش میں آپ کے ساتھ جنگ میں شریک ہوتا۔ اگر بالفرض حزب اللہ کا کوئی مجاہد یمن میں شہید ہوا تو ہم اسے چھپائیں گے نہیں۔
انہوں نے یمن کے خلاف جارح سعودی اتحاد سے ملیشیا کی علیحدگی کو سراہتے ہوئے کہا کہ دیگر ممالک بھی یمن کے مظلوم عوام پر جارحیت کرنے والے اس سعودی اتحاد میں شمولیت پر تجدید نظر کریں۔

منبع: http://fa.alalam.ir/news/3645851

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/خ/ب/۲۰۱/ ۱۰۰۰۳

  • facebook
  • googleplus
  • twitter
  • linkedin
لینک خبر : https://kheybar.net/?p=6950

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے