بیت المقدس اور غرب اردن میں یہودی آبادکاروں کے لیے ۶۱۰ مکانات کی منظوری




صہیونی ریاست نے فلسطین کے مقبوضہ بیت المقدس اور غرب اردن میں یہودی آباد کاروں کے لیے ۶۱۰ نئے مکانات کی تعمیر کی منظوری دے دی ہے۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، یہودی ریاست نے غرب اردن کے شمال مشرقی علاقے میں قائم کردہ ایک یہودی کالونی میں ۳۰۰ مکانات کی تعمیر کی منظوری دی ہے جب کہ مقبوضہ بیت المقدس میں ۳۱۰ مکانات کی تعمیر کا اعلان کیا گیا ہے۔

عبرانی ٹی وی ۷  کے مطابق صہیونی حکام نے شمال مشرقی رام اللہ میں بیت ایل یہودی کالونی میں مکانات کی تعمیر کے لیے فلسطینی اراضی کی کھدائی شروع کردی ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ صہیونی حکومت غرب اردن میں رام اللہ میں قائم ’بیت ایل‘ یہودی کالونی میں ۳۰۰ گھر تعمیر کرنا چاہتی ہے۔

اس کےعلاوہ قابض صہیونی ریاست نے بیت المقدس میں الشیخ جراح کے مقام پر ۱۵، وسطی بیت المقدس میں ’بیت حنینا‘ میں ۷۵ اور جنوبی بیت المقدس میں ’نوف زبون‘ کے مقام پر ۲۲۰ مکانات تعمیر کیےجائیں گے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ الشیخ جراح میں جہاں یہودی آباد کاروں کے لیے مکانات تعمیر کیے جا رہے ہیں وہ وقف شدہ فلسطینی اراضی کا حصہ ہیں۔

مرکز اطلاعات فلسطین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/خ/۱۰۰۰۳