’گوگل‘ کی اسرائیل نوازی کا پردہ چاک




’عرب سوشل میڈیا ڈویلپمنٹ سینٹر‘ کے زیر اہتمام شروع کردہ ایک نئی مہم کے تحت ’گوگل‘ کی اسرائیل نوازی کو بے نقاب کیا گیا اور کہا گیا کہ ’گوگل‘ کمپنی بھی صہیونی ریاست کی آلہ کار بن گئی ہے۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، بین الاقوامی سرچ انجن  ’گوگل‘ فلسطین میں اسرائیلی ریاست کے جرائم پر پردہ ڈالنے کی سازشوں میں پیش پیش ہے۔ کمپنی کی طرف سے فراہم کی جانے والی آن لائن خدمات، نقشوں اور معلومات میں فلسطینی موقف کے بجائے غاصب صہیونی ریاست کے موقف کو اجاگر کیا جا رہا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ’گوگل‘ کی جانب سے اپنے ہاں تیار کردہ فلسطین کے نقشوں میں فلسطینی قوم کے مطالبات اور ان کے موقف کو نظرانداز کرکے اسرائیل کے موقف کی ترویج کی گئی ہے۔ فلسطینی شہروں میں جگہ جگہ قائم کردہ یہودی کالونیوں کا ذکر ہے مگر وہاں پر فلسطینی شہروں کے ناموں کا کوئی ذکر نہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ گوگل کے نقشوں میں فلسطینیوں پر عرصہ حیات تنگ کرنے کے لیے قائم کی گئی چیک پوسٹوں، فوجی کیمپوں اور چوکیوں کا کوئی ذکر نہیں ملتا حالانکہ یہ چیک پوسٹیں فلسطینیوں کے لیے وبال جان ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ فلسطینی شہروں کے عربی اور اسلامی ناموں کے بجائے عبرانی ناموں کے ساتھ ظاہر کرنا صہیونی ریاست کے موقف کی ترویج کرنے کے مترادف ہے۔ گوگل نے ایسا کرکے اپنی غیرجانب دارانہ ساکھ کو بے پناہ نقصان پہنچایا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ گوگل کی طرف سے فلسطین کے حوالے سے غلط معلومات اور جعلی باتوں کو حقائق کے طور پر پیش کرنا سنگین غلطی ہے اور اس کے نتیجے میں پوری دنیا کو گمراہ کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

.palinfo.com

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/خ/۱۰۰۰۳