نیتن یاہو کے ترجمان جنسی ہراسانی کی وجہ سے مستعفیٰ




امریکہ میں متعین نیتن یاہو کے ترجمان ڈیوڈ کیز نے جنسی ہراسانی اور اخلاقی فساد کی وجہ سے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، فرانس نیوز ایجنسی نے لگ بھگ دو ماہ قبل خبر دی تھی کہ نیتن یاہو کے ترجمان پر اسرائیل سے لے کر امریکہ تک خواتین کی جانب سے جنسی ہراسانی اور غیر مناسب رویے کی شکایات سامنے ۤآئی ہیں۔
اسرائیلی پارلیمنٹ کے متعدد اہم اراکان جن میں خواتین بھی سرفہرست ہیں نے وزیر اعظم کے ترجمان ڈیوڈ کیز کے خلاف جنسی ہراسانی کے الزامات کی تحقیقات کا مطالبہ کیا تھا تاہم ان کے خلاف لگائے گئے الزامات ثابت ہو جانے کے بعد ویوڈ کیز نے استعفیٰ دے دیا ہے۔
اسرائیلی وزیر اعظم نے ڈیوڈ کیز کا استعفیٰ قبول کرتے ہوئے ان پر عائد الزامات کی طرف کوئی اشارہ نہیں کیا اور صرف اسرائیل کے شعبہ ذرائع ابلاغ میں کیز کی خدمات کا شکریہ ادا کیا۔

خیال رہے کہ ڈیوڈ کیز پر ۱۲ خواتین نے جنسی ہراسانی اور غیر اخلاقی برتاؤ کے الزامات عائد کئے تھے جن کے ثابت ہونے کی بنا پر انہیں اپنے عہدے سے استعفیٰ دینا پڑا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/خ/۱۰۰۰۳