بیروت سے شائع کتاب میں اسرائیل نواز نریندر مودی کا مکروہ چہرہ بے نقاب




لبنان کے صدر مقام بیروت میں قائم زیتونہ اسٹڈی سینٹرکی طرف سے ایک کتاب جاری کی گئی ہے جس میں بھارت اور اسرائیل کے درمیان بڑھتے تعلقات بالخصوص موجودہ انتہا پسند بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے مکروہ کردار کو بے نقاب کیا گیا ہے۔



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ:  “اسرائیل نواز بیانیہ اور بھارتی مثال” کے عنوان سے یہ کتاب ڈاکٹر محمد مکرم بلعاوی اور حسام عمران کی مشترکہ تالیف ہے۔ کتاب میں بھارت اور اسرائیل کے درمیان تعلقات کے اتارو چڑھاؤ۔ رائے عامہ اور فیصلہ ساز اداروں کے دونوں ملکوں‌ کے تعلقات کے فروغ پر اثرات اور بھارت اور اسرائیل کی موجودہ حکومتوں بالخصوص بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور اسرائیل کے بنجمن نیتن یاھو کے کردار پر تفصیل سے روشنی ڈالی گئی ہے۔

تین ابواب پر مشتمل کتاب ۱۰۲ صفحات کو محیط ہے۔ کتاب میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل نے بھارت کے ساتھ سرد جنگ کے خاتمے کے بعد تل ابیب نے نئی دہلی کے ساتھ تمام شعبوں تعلقات کے قیام کی کوششیں شروع کیں۔ اسرائیل نے بھارت کے ساتھ دوستانہ تعلقات کو وزارت خارجہ کہ اہم پالیسی قرار دیا اور اسی پالیسی کے تحت بھارت کے ساتھ راہ و رسم بڑھائی گئی۔

بھارت میں بھارتیا جنتا پارٹی کے سربراہ نریندر مودی اور ان کی جماعت کے اقتدار میں آنے کے بعد اسرائیل اور بھارت کے درمیان تعلقات کے ایک نئے دور کا آغاز ہوا۔ بھارت نریندر مودی نے ہندو قوم پرستی کا نعرہ لگایا اور غیر ہندو اقوام بالخصوص مسلمانوں کے حوالے سے نسل پرستانہ طرز عمل اختیار کیا گیا۔ مسلمانوں کو بھارت سے باہرسے آنے والے درانداز قرار دیا۔

اسی طرح اسرائیل میں‌ بھی نریندر مودی کے ہم خیال بنجمن نیتن یاھو کی حکومت قائم ہوئی اور اس نے بھی فلسطینیوں کے خلاف نسل پرستانہ سیاست کو مزید فروغ دینے کی کوشش شروع کردی۔

سنہ ۲۰۱۸ء کے دوران بھارت اور اسرائیل کے تعلقات میں اس وقت ڈرامائی تبدیلی آئی جب اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو نے بھارت کی طویل یاترا کی۔ دونوں ملکوں ‌نے ایک دوسرے کے ساتھ دفاعی اور فوجی معاہدے کئے اور ایک دوسرے اسلحہ کی‌ خریداری کی کئی ڈیلیں کیں۔ بھارت اب اسرائیل سے ٹیکنالوجی کے شعبے میں تعاون حاصل کرے گا اور اسے بالعموم بھارت میں مقیم مسلمانوں بالخصوص مقبوضہ کشمیر کے مظلوم مسلمانوں کے خلاف استعمال کرے گا۔ بیروت سے شائع ہونے والی کتاب میں کہا گیا ہے کہ یہ سب کچھ بھارت اور اسرائیل کی موجودہ برسراقتدار قیادت بالخصوص نریندر مودی اور بنجمن نیتن یاھو کی باہمی دوستی کی بدولت ہوا ہے۔

مرکز اطلاع رسانی فلسطین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/ی/۱۰۰۰۳