جسم فروشی کے لئے اپنی ۱۲ سالہ لڑکی بھیجنے کے جرم میں یہودی ماں گرفتار





خیبر صہیون تحقیقاتی سینٹر کے مطابق، اسرائیل میں ایک یہودی ماں نے اپنی ۱۲ سال کی لڑکی کو جسم فروشی کے لیے قحبہ خانہ بھیج دیا جس کے بعد پولیس کو اطلاع ملنے پر اسے گرفتار کر لیا گیا۔
روزنامہ ٹائمز آف اسرائیل کے مطابق دو روز قبل ایک یہودی ماں کو اس جرم میں گرفتار کیا گیا کہ اس نے اپنی ۱۲ سالہ لڑکی کو جسم فروشی کے لئے قحبہ خانہ میں بھیج دیا، پولیس کو اطلاع ملتے ہی لڑکی کو واپس لے لیا گیا چونکہ لڑکی کی عمر ۱۸ سال سے کم تھی اور وہ قانونی طور پر جسم فروشی کے عمل کو انجام نہیں دے سکتی تھی۔
خیال رہے کہ بعض لوگوں کا یہ خیال ہے کہ اسرائیل یہودیوں کے لیے دنیا میں ایک بہشت کے مانند ہے لیکن حقیقت اس کے خلاف ہے، اسرائیل فقر و فاقہ، چوری ڈکیتی، فحشا و فساد، ہم جنس پرستی اور نسلی امتیاز جیسے جرائم سے بھرا ہوا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد/۱۰۳