کانگرنس کے دو مسلمان ممبروں کا مسجد الاقصیٰ دورہ، اسرائیل تشویشناک




خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، اسرائیل کے ٹی وی چینل ۱۳ نے خبر دی ہے کہ امریکی رکن پارلیمنٹ ’الہان عمر‘ اور ’رشیدہ طلیب‘ کل جمعہ کو مقبوضہ فلسطین اور مسجد الاقصیٰ کا دورہ کر رہی ہیں۔ اس بنا پر تل ابیب میں وزیر اعظم ہاوس میں ایک خفیہ میٹنگ کی گئی جس […]



خیبر صہیون تحقیقاتی ویب گاہ کے مطابق، اسرائیل کے ٹی وی چینل ۱۳ نے خبر دی ہے کہ امریکی رکن پارلیمنٹ ’الہان عمر‘ اور ’رشیدہ طلیب‘ کل جمعہ کو مقبوضہ فلسطین اور مسجد الاقصیٰ کا دورہ کر رہی ہیں۔ اس بنا پر تل ابیب میں وزیر اعظم ہاوس میں ایک خفیہ میٹنگ کی گئی جس میں اسرائیل مخالف دو مسلمان امریکی خواتین کو مسجد الاقصیٰ میں جانے کی اجازت دیئے جانے کے حوالے سے گفتگو کی گئی۔
القدس العربی کی رپورٹ کے مطابق صہیونی ذرائع ابلاغ نے کہا ہے کہ اسرائیلی فوج کو حکم دیا گیا ہے کہ ان کے مسجد الاقصیٰ میں داخلے پر پابندی نہ لگائیں۔ ذرائع نے کہا ہے کہ اگر امریکی رکن پارلیمنٹ مسلمان خواتین کو مسجد الاقصیٰ میں داخل ہونے سے روک دیا گیا تو اس سے اسرائیل کے امریکی ڈیموکریٹس کے ساتھ تعلقات متاثر ہو جائیں گے اور عالمی سطح پر بھی اسرائیل کی تصویر متاثر ہو گی۔
خیال رہے کہ کانگرنس کی یہ دو رکن خواتین ’اسرائیل بائیکاٹ تنظیم‘ BDS کی حامیوں میں سے ہیں اور انہوں نے حالیہ دنوں ایک مہم کے تحت امریکیوں کو اس تنظیم میں شمولیت کی دعوت دی ہے اسی وجہ سے اسرائیل کو تشویش لاحق ہے کہ کبھی یہ خواتین مسجد الاقصیٰ میں اسرائیلی مظالم کے خلاف زبان کھول دیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد؍۱۰۳